منیش سسودیا کی ضمانت کی درخواست کی سماعت سے سپریم کورٹ کے جج نے خود کو الگ کر لیا

تاثیر۱۱  جولائی ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

نئی دہلی، 11 جولائی: سپریم کورٹ نے دہلی ایکسائز گھوٹالہ معاملے میں دہلی کے سابق نائب وزیر اعلی منیش سسودیا کی ضمانت کی عرضی پر سماعت ملتوی کر دی ہے۔ سپریم کورٹ کے جج جسٹس سنجے کمار نے خود کو سماعت سے الگ کر لیا ہے۔ جسٹس سنجیو کھنہ کی قیادت والی بنچ نے اگلے ہفتے سسودیا کی ضمانت کی درخواست پر سماعت کا حکم دیا۔ سسودیا نے دہلی ہائی کورٹ کے 21 مئی کو ضمانت دینے سے انکار کرنے کے حکم کو چیلنج کیا ہے۔ دہلی ہائی کورٹ نے کہا تھا کہ سسودیا نے اپنے عہدے کا غلط استعمال کیا۔ گھوٹالے کے الیکٹرانک ثبوت بھی تلف کر دیے گئے۔ وہ باہر آ کر ثبوتوں اور گواہوں پر اثر انداز ہو سکتے ہیں۔ ہائی کورٹ میں سماعت کے دوران ای ڈی کے وکیل زوہیب حسین نے کہا تھا کہ ملزمان کی وجہ سے اس کیس کی سماعت میں تاخیر ہو رہی ہے۔ منیش سسودیا کی جانب سے ضمانت کا مطالبہ کرتے ہوئے یہ دلیل دی گئی کہ اس معاملے میں ای ڈی اور سی بی آئی کی جانچ ابھی بھی جاری ہے۔ سسودیا کی طرف سے پیش ہوئے سینئر وکیل داین کرشنن نے کہا تھا کہ اس معاملے میں گرفتاریاں ابھی جاری ہیں۔ سماعت کے دوران داین کرشنن نے سپریم کورٹ کے فیصلے کا حوالہ دیا اور کہا کہ سی بی آئی نے اس معاملے میں ایک اہم چارج شیٹ اور دو سپلیمنٹری چارج شیٹ داخل کی ہیں۔ ای ڈی نے ایک اہم چارج شیٹ اور چھ سپلیمنٹری چارج شیٹ داخل کی ہیں۔ دونوں معاملوں کی تفتیش ابھی جاری ہے۔ اس معاملے میں گرفتاری ابھی بھی جاری ہے۔ تازہ ترین گرفتاری 3 مئی کو ہوئی تھی۔ انہوں نے کہا تھا کہ ایک بھی ملزم کے خلاف الزامات عائد نہیں کئے گئے۔ سیسودیا کی درخواست ضمانت کی سماعت کے دوران ٹرائل کورٹ نے اس پہلو پر غور نہیں کیا۔ انہوں نے کہا کہ ٹرائل شروع کرنے کی طرف صفر کام کیا گیا ہے۔ ایسے میں سپریم کورٹ کے فیصلے کے مطابق منیش سسودیا کو ضمانت ملنی چاہئے۔