کٹھوعہ حملہ کا بدلہ لیں گے

تاثیر۹  جولائی ۲۰۲۴:- ایس -ایم- حسن

نئی دہلی، 09 جولائی:جموں و کشمیر کے کٹھوعہ میں کل دہشت گردوں نے حملہ کیا۔ جس کی وجہ سے اتراکھنڈ کے پانچ فوجی شہید ہو گئے۔ اس خبر کے بعد دیو بھومی سوگ میں ڈوبی ہوئی ہے۔ اہل خانہ صدمے سے دوچار ہیں، شہداء کے گھروں اور دیہات میں سوگ کی فضاء پھیل گئی ہے۔ دریں اثناء دفاعی سکریٹری گریدھر ارمان نے سخت الفاظ میں کہا کہ پانچ فوجیوں کی ہلاکت کا بدلہ لیا جائے گا اور ہندوستان حملے کے پیچھے بری طاقتوں کو نہیں بخشے گا۔اس کے ساتھ ہی وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے فوجیوں کی شہادت پر غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مسلح افواج خطے میں امن قائم کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔ قابل ذکر ہے کہ پیر کو دہشت گردوں نے کٹھوعہ کے بلور ضلع کے بدنوٹا کے برنود علاقے میں جنڈا نالے کے قریب فوج کی گاڑی پر گھات لگا کر حملہ کیا تھا۔ دہشت گردوں کے حملے میں پانچ فوجیوں نے جام شہادت نوش کیا۔ کچھ دیگر بری طرح زخمی ہوئے۔ہائی الرٹ اور حملے کے ان پٹ کے درمیان جموں و کشمیر میں ایک ماہ میں سب سے بڑا دہشت گرد حملہ کیا گیا۔ حملے کے ذمہ دار دہشت گردوں کی گرفتاری کے لیے بڑے پیمانے پر سرچ آپریشن شروع کر دیا گیا ہے۔ وزیر دفاع نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم ایکس پر کہا، میں جموں و کشمیر کے بدنوٹا میں دہشت گردانہ حملے میں ہندوستانی فوج کے پانچ بہادر جوانوں کی شہادت سے غمزدہ ہوں۔ سوگوار خاندانوں سے میری گہری تعزیت۔ مشکل کی اس گھڑی میں ملک ان کے ساتھ کھڑا ہے۔انسداد دہشت گردی کی کارروائیاں جاری ہیں اور ہمارے فوجی علاقے میں امن و امان برقرار رکھنے کے لیے پرعزم ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ میں اس حملے میں زخمی ہونے والوں کی جلد صحت یابی کے لیے دعا گو ہوں۔ وزیر دفاع ارمان نے بھی حملے میں پانچ بہادر جوانوں کی ہلاکت پر گہرے دکھ کا اظہار کیا اور سوگوار خاندانوں سے دلی تعزیت کا اظہار کیا۔انہوں نے کہا، ملک کے لیے ان کی بے لوث خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا اور ان کی قربانی کا بدلہ لیا جائے گا اور بھارت حملے میں ملوث بری طاقتوں کو شکست دے گا۔ کیرتی نگر بلاک کے ٹھٹی ڈگر کے رہنے والے رائفل مین آدرش نیگی، رودرپریاگ کے رہنے والے نائب صوبیدار آنند سنگھ، لانس ڈاؤن کے رہنے والے حولدار کمل سنگھ، ٹہری گڑھوال کے رہنے والے نائیک ونود سنگھ، رائفل مین انوج نیگی، ریکھل کے رہنے والے نے اپنی جانیں قربان کیں۔خبر کے بعد ان کے گھر میں کہرام مچ گیا ہے۔ یہ خبر پورے علاقے میں جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی۔ جس کی وجہ سے گھر والوں کا برا حال ہے اور رو رہے ہیں۔ 26 سالہ آدرش نے 2018 میں فوج میں شمولیت اختیار کی تھی۔ ان کے والد دلبیر سنگھ نیگی گاؤں میں ہی کھیتی باڑی کا کام کرتے ہیں۔آدرش نے گورنمنٹ انٹر کالج پپلی دھر سے 12ویں تک تعلیم حاصل کی۔ 2018 میں اس نے گڑھوال رائفلز میں شمولیت اختیار کی۔ اس دوران وہ گڑھوال یونیورسٹی سے بی ایس سی کے دوسرے سال کے طالب علم تھے۔ آدرش تین بہن بھائیوں میں سب سے چھوٹا تھا۔ اہل خانہ کو پیر کی رات دیر گئے ان کی قربانی کی خبر ملی۔